سوات میں پرائیویٹ سکولوں کی بڑھتی ہوئی فیسوں نے طلبہ اور والدین کو پریشان کردیا،غریب طلبہ کیلئے تعلیم کاحصول مشکل ہوگیا،حکومت اس طرف توجہ دے،اس حوالے سے سوات بارایسوسی ایشن کے صدرسعیدخان ایڈووکیٹ نے کہاہے کہ تعلیم کی اہمیت سے انکارنہیں کیا جاسکتااوریہ ایک کھلی حقیقت ہے کہ تعلیم ہی کے ذریعے قومیں ترقی کرسکتی ہیں اوراس کے بغیر ترقی ممکن نہیں مگر مقام افسوس ہے کہ سوات میں پرائیویٹ سکولوں نے ایک طرف فیسیں بڑھاکر اوردوسری طرف سکولوں میں کتابین فروخت کرنے کا سلسلہ شروع کرکے طلبہ اور ان کے والدین کوسخت پریشانی میں مبتلا کردیاہے،انہوں نےکہاکہ عوام بدترین مہنگائی اور بے روزگاری کی چکیوں میں پس رہے ہیں،انہیں قدم قدم پر مختلف قسم کی مشکلات کاسامنا ہے مگروہ اس امیدپر بچوں کو تعلیم دلارہے ہیں تاکہ انہیں روشن مستقبل مل سکے مگر پرائیویٹ سکولوں کی کمر توڑ فیسیں اوردیگر اخراجات ان کی امیدوں پر پانی پھیر رہے ہیں،سعیدخان ایڈووکیٹ نے حکومت سے مطلبہ کیاکہ وہ پرائیویٹ سکولوں کو ایک مناسب فیس کاپابند بنانے سمیت نصابی کتابوں کی قیمتوں میں کمی کرکے طلبہ اور والدین کی پریشانیوں کا خاتمہ کرے